Facebook Twitter Google Plus RSS

Nooh Aleh Salam Ki Kashti

Hazrat Nooh Aleh Salam ki qoum bari badbakht aur na aaqibat andesh thi. Hazrat Nooh Aleh Salam ne saarhay no so saal kay arsa mein din raat tableegh haq farmai. Magar woh nah manay. Aakhir Hazrat Nooh Aleh Salam ne in ki halakat ki dua mangi aur khuda say arz ki k maula! In kafiron ko beekh wo bin say ukhaar day. Chunacha aap ki dua qabool hogayi aur khuda ne hukum diya k: Ay Nooh! Mein pani ka aik tufaan azeem launga aur in sab kafiron ko halak kar dunga tu apnay aur chand man-nay walon kay liye aik kashti banale. Chunacha Hazrat Nooh Aleh Salam ne aik jungle mein kashti banana shuru farmai kafir aap ko dekhte aur kehtay. Ay nooh! Kya kartay ho aap farmatay aisa makaan banata hon jo pani par chalay. Kafir yeh sun kar hanstay aur tamaskhur kartay thay Hazrat Nooh Aleh Salam farmatay k aaj tum hanstay how aur aik din hum tum par hansein gay. Hazrat Nooh Aleh Salam ne yeh kashti do saal mein tayyar ki is ki lambai teen so gaz, choraai pachaas gaz aur unchai tees gaz thi. Is kashti mein teen darjay banaye gaye thay. Nechay kay darjay mein wahosh aur darindey, darmiyani darja mein chopaye waghera aur oopar kay darja mein khud Hazrat Nooh Aleh Salam aur aap kay saathi aur khanay peene ka samaan, parinday bhi oopar kay darja mein thay, phir jab bahukum elahi tufaan azeem aaya to is kashti par sawaar honay walon kay siwa roye zameen par jo koi bhi tha. Pani mein ghark ho gaya hat-ta k Hazrat Nooh Aleh Salam ka beta kannaan bhi jo kafir tha asi tufaan mein ghark hogaya.
(quran kareem sura hood. Khizaen al irfan)
Sabaq : Khuda ki nafarmani say is duniya mein bhi tabahi wo halakat ka saamna karna parta hai aur Allah aur is kay Rasool par imaan, aur in ki itaat say he dono jahan mein nijaat wo falah mil sakti hai.
Source:

نوح علیہ السلام کی کشتی

حضرت نوح علیہ السلام کی قوم بڑی بدبخت اور ناعاقبت اندیش تھی۔ حضرت نوح علیہ السلام نے ساڑھے نو سو سال کے عرصہ میں دن رات تبلیغ حق فرمائی۔ مگر وہ نہ مانے۔ آخر حضرت نوح علیہ السلام نے ان کی ہلاکت کی دعا مانگی اور خدا سے عرض کی کہ مولا! ان کافروں کو بیخ وبن سے اکھاڑ دے۔ چنانچہ آپ کی دعا قبول ہوگئی اور خدا نے حکم دیا کہ: اے نوح! میں پانی کا ایک طوفان عظیم لاؤں گا اور ان سب کافروں کو ہلاک کردوں گا تو اپنے اور چند ماننے والوں کے لئے ایک کشتی بنا لے۔
چنانچہ حضرت نوح علیہ السلام نے ایک جنگل میں کشتی بنانا شروع فرمائی کافر آپ کو دیکھتے اور کہتے۔ اے نوح! کیا کرتے ہو آپ فرماتے ایسا مکان بناتا ہوں جو پانی پر چلے۔ کافر یہ سن کر ہنستے اور تمسخر کرتے تھے حضرت نوح علیہ السلام فرماتے کہ آج تم ہنستے ہو اور ایک دن ہم تم پر ہنسیں گے۔ حضرت نوح علیہ السلام نے یہ کشتی دو سال میں تیار کی اس کی لمبائی تین سو گز، چوڑائی پچاس گز اور اونچائی تیس گز تھی۔ اس کشتی میں تین درجے بنائے گئے تھے۔نیچے کے درجے میں وحوش اور درندے، درمیانی درجہ میں چوپائے وغیرہ اور اوپر کے درجہ میں خود حضرت نوح علیہ السلام اور آپ کے ساتھی اور کھانے پینے کا سامان پرندے بھی اوپر کے درجہ میں تھے، پھر جب بحکم الٰہی طوفان عظیم آیا تو اس کشتی پر سوار ہونے والوں کے سوا روئے زمین پر جو کوئی بھی تھا۔ پانی میں غرق ہو گیا حتٰی کہ نوح علیہ السلام کا بیٹا کنعان بھی جو کافر تھا اسی طوفان میں غرق ہوگیا۔
(قرآن کریم سورۃ ہود۔ خزائن العرفان)
سبق:
خدا کی نافرمانی سے اس دنیا میں بھی تباہی و ہلاکت کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور اللہ اور اس کے رسول پر ایمان، اور ان کی اطاعت سے ہی دونوں جہان میں نجات و فلاح مل سکتی ہے۔

Source:
Posted on Nov 10, 2012 by asif